35

اگر عمران خان عائشہ گلالئی کے مطالبے پر اپنا بلیک بیری دے دیتے تو کیا ہوتا ۔۔۔۔ نامور (ن) لیگی رہنما نے نئی بحث چھیڑ دی

لاہور (انر پاکستان آن لائن) پاکستان مسلم لیگ (ن) کے رہنما و وزیر قانون پنجاب رانا ثناء اللہ نے تحریک انصاف کی خواتین سے متعلق اپنے بیان پر معافی مانگنے کی بجائے نیا پنڈورا باکس کھول دیا۔ایک ویڈیو بیان میں رانا ثناء اللہ کا کہنا تھا کہ وہ کل کے بیان پر تنقید کرنے والے احباب کی عزت

کرتے ہیں لیکن انہوں صرف 2011 اور 2018 کے جلسوں کا موازنہ کیا تھا، کسی مخصوص خاتون یا مرد ورکر کو نشانہ نہیں بنایا۔انہوں نے کہا کہ ’’تحریک انصاف اس معاملے کو ایشو بنا رہی ہے لیکن پہلے وہ خود اپنے گریبان میں جھانکیں کہ عائشہ گلالئی کا کیا حشر کیا، عمران خان انہیں جنسی طور پر ہراساں کرنے کے لیے میسیج بھیجتے رہے۔‘‘ وبائی وزیر قانون کا کہنا ہے کہ اگر عمران خان عائشہ گلالئی کے مطالبے پر بلیک بیری فون دے دیں، تو وہ معذرت کرنے کو تیار ہیں۔اس سے قبل پاکستان تحریک انصاف کے رہنما علی زیدی نے رانا ثناء اللہ کے خواتین سے متعلق بیان پر سخت ردعمل کا اظہار کیا تھا۔علی زیدی کا کہنا تھا کہ نہ تو مریم نواز نے اس بیان کی مذمت کی، نہ ہی رانا ثناء کو شوکاز نوٹس دیا لہٰذا شہباز شریف نے 48 گھنٹے میں معافی نہ مانگی تو خواتین کراچی میں گورنر ہاؤس کا گھیراؤ کریں گی۔یاد رہے کہ صوبائی وزیر رانا ثناء اللہ نے پی ٹی آئی کے 29 اپریل کے جلسے میں شریک خواتین کے حوالے سے نامناسب الفاظ کہے تھے جن کی گزشتہ روز پی ٹی آئی چیئرمین عمران خان نے بھی شدید مذمت کی تھی۔ اور کہا کہ ہمارے لئے مائیں بہنیں سب قابل احترام ہیں-

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں